میرا ایک خواب ہے

میرا ایک خواب ہے ، یہ تاریخی الفاظ ایک بہت بڑے امریکی رہنما کے ہیں ، جس کا نام تھا مارٹن کنگ لوتھر ، وہ اگست کا ہی مہینہ تھا شاید اٹھائیس اگست ، ہزاروں لوگ جمع تھے ، لنکن میموریل پر ، وہ تحریک ایک عورت کو بس کی سیٹ سے نسلی بنیاد پر اٹھائے جانے سے شروع ہوئی تھی ، اور پھر ایک جم غفیر تھا جو اس تحریک میں شامل ہو گیا تھا اور مارٹن کنگ لوتھر نے اسے لیڈ کیا ، اور پھر لنکن میموریل پر کہا

I have a dream that one day this nation will rise up and live out the true meaning of its creed: "We hold these truths to be self-evident: that all men are created equal.”
ترجمہ؛ میرا ایک خواب ہے ، کہ ایک دن یہ قوم اٹھ کھڑی ہو گی اور اپنے اصل پہچان کے ساتھ زندہ رہے گی ، ہم ان سچائیوں کے مالک ہیں جو ظاہر ہیں ، اور سب برابر ہیں

اور پھر کہا

I have a dream that my four little children will one day live in a nation where they will not be judged by the color of their skin but by the content of their character.

ترجمعہ ؛ میرا ایک خواب ہے ، میرے چار بچے اس قوم کا حصہ بنیں گے ، جہاں رنگ و نسل سے انکی پچان نہیں ہوگی بلکہ انکے کردار انکی پہچان ہو گا

یہ خواب دیکھنے والے نے اپنے اس خواب کو پورا کر دیکھایا ، آج کا امریکہ دنیا کی نظر میں کچھ بھی ہو ، اس میں نسل پرستی ختم ہو چکی ہے ، یہ سچا رہنما تھا جب اسے کہا گیا کہ آپ ماؤنٹین ہل پر نہ جاؤ کہ آپ کی جان کو خطرہ ہے ، تو اسنے کہا کہ میں چند نااقابت اندیش لوگوں کی وجہ سے میں اپنی قوم کو کیسے چھوڑ دوں ؟ اور پھر جب اسے قتل کر دیا گیا ، تو اس وقت تک وہ ایک عظیم رہنماء بن چکا تھا ۔ ۔ ۔

آج مارٹن کنگ لوتھر کا کیوں یاد آیا ، اس لیے کہ میرے ملک کے ایک صوبائی وزیر بھی خواب دیکھنے لگے ہیں ، مگر ان خوابوں کا تعلق کسی بھی طرح عوام سے نہیں ہے ، انہیں مخصوص خواب آتے ہیں ، اور خواب بھی سچے ، اور خواب آنے کے بعد امن ہونے کے بجائے ، لاشیں گرتیں ہیں ، مگر وہ اپنے “بِل“ سے نہیں نکلتے ، آج مجھے بہت کمی محسوس ہو رہی ہے ، میرے ملک میں کوئی مارٹن کنگ لوتھر نہیں ، جو کوئی خواب دیکھے سکے اور کہ سکے

"Free at last! free at last! thank God Almighty, we are free at last

اب اسکا کیا ترجمہ کروں ؟ یہ مارٹن کنگ لوتھر کی تاریخی تقریر کے آخری الفاظ ہیں ، انہوں نے کہا

اور ہم کہ سکیں کہ ، ہم آخرکار آزاد ہیں ، شکر ہے اللہ کا ، کہ ہم آزاد ہیں ۔ ۔ ۔ ۔

میرا بھی خواب ہے ، کہ میں یہ کہ سکوں ۔ ۔ ۔ ۔۔ شکر ہے ہم آزاد ہیں ۔ ۔ ۔ اور میں اپنے وزیر کو بتا سکوں کہ خواب کیسے دیکھے جاتے ہیں ۔ اور خواب سچے ہوں یا نہ ہوں تعبیر خود سچی کرنی ہوتی ہے ۔ ۔ ۔

Advertisements

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: