دو نعتیں

پلکیں بچھا رہے ہیں ، ہم خوشیاں منا رہے ہیں
سب کو ہو مبارک ، سرکار آ رہے ہیں

ظلمت جہاں کی اب تو ، مٹ جائے گئ یقیناَ
قرآن کا اجالا ہر سو پھیلا رہے ہیں

عاصیوں کو یہ خبر ہو ، انکے لئے ہے رحمت
شافعی ہیں وہ تو اپنے ، آب کوثر پلا رہے ہیں

اللہ نے سُنئ ہے ، جو بھی دعا ہے مانگی
دیا واسطہ احمد ، تبھی ہم یہ پا رہے ہیں

درود و سلام بھیجیے ، ہر ایک پل میں اظہر
آقا کے آنے کی ہم ، آج عید منا رہے ہیں

———————————-

یا محمد ، محمد کرم کیجیئے
میری جھولی کو بھر دیجیے

دکھوں نے ہے گھیرا ، غموں نے ہے مارا
سوا آپ کے کوئی نہیں ہے سہارا
ہم پے بھی اک نظر کیجیے
میری جھولی کو بھر دیجیے

ستاتا ہے ہم کو اب یہ زمانہ
ہمیں دیجیے رحمتوں کا خزانہ
زندگی کو اپنی طرف کر لیجئے
میری جھولی کو بھر دیجیے

اللہ پے میرا ایمان ہو
طیبہ میں جانے کا سامان ہو
مریں جب لب پے ہو صلی علہ
بس یہ ہی دعا اظہر کیجیے

Advertisements

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: