شنید

ظلم یہ مٹ جائے گا
عدل ہی رہ جائے گا
محل والا نہ ہو گا کوئی
محل مگر رہ جائے گا

دھرتی شعلے اگلے گی
بارود جو بویا جائے گا
ظلمت کا داغ کبھی بھی نا
ظلم سے دھویا جائے گا

کب تک آخر یہ دنیا
ظالم کا ساتھ نبھائے گی
دعا یہ مظلوموں کی
اک دن رنگ تو لائے گی

اک شخص کے گناہوں کی
سزا ملت کیوں پائے گی
حاکم تو چلا ہی جائے گا
قوم مگر رہ جائے گی

Advertisements

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: