مشرف آخر جائے گا

کچھڑی نئی پکائے گا
آگ نئی لگائے گا
کرسی سے چپکائے گا
مشرف یوں نہ جائے گا
 
 
الیکشن ہوں یا سلیکشن ہو
ایکشن ہو یا ری ایکشن ہو
پبلک چیخے یا چُپ ہو جائے
ٹوٹا چاہے ہر اک کنکشن ہو
یہ جہاں ہے وہیں رہ جائے گا
مشرف یوں نہ جائے گا
 
 
بُش کا تو ساتھی ہے یہ
پاجیوں سے بڑا پاجی ہے یہ
شرم و احساس سے عاری
سفید چٹا ہاتھی ہے یہ
عوام سے جوتے کھائے گا
مشرف یوں نہ جائے گا
 
 
 
اسکو ہٹاؤ دیس بچاؤ
کچھ بھی کرو پر اسکو بھگاؤ
مل کر سب اب آگے آؤ
ساتھیو قدم آگے بڑھاؤ
کیسے یہ جان چھڑائے گا
آج نہیں تو کل یہ جائے گا

مشرف آخر جائے گا
مشرف آخر جائے گا

Advertisements

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ لاگ آؤٹ / تبدیل کریں )

Connecting to %s

%d bloggers like this: